Noise pollution in Karachi

< > IT was saddening to read Dr Saleem Siddiqui’s letter wherein he has lamented how pollution has grown in Karachi and how he and his 95-year-old mother are suffering. < > Since their apartment is in a noisy location, so first he should consider shifting to a quieter locality, if possible, as service to his mother, despite the difficulties it is likely to pose. < > If that’s impossible, it may be worthwhile to try ear plugs for the lady. These should be available in Karachi since some industrial concerns provide these to their employees working on noisy machines. The silicone rubber type should be more comfortable and could probably be bought from sports goods shop

…Read More

Issues relating to GM corn trials in Pakistan

< > Recently Dupont Pioneer, Monsanto and Syngenta had planted Bt / GM Corn / maize for trials in Pakistan to obtain commercial approval for this biotech crop. Now the trials have been destroyed as required by current regulatory framework. < > To date no proper law exists to regulate GM crops in Pakistan at the provincial level. As directed by Federal Ministry of Law, after 18th constitutional amendment in Pakistan, provinces should be dealing with this issue and not federal government. Thus a law is required to be passed in all the four provinces immediately otherwise pursuing Biotech or GM crops in Pakistan would raise legal issues in the future. < > To-date the S

…Read More
  • ترجیحات۔۔ انسان اور حیوان؟؟؟

    ہمارے ملک کی دیہی آبادی کا دارومدار زراعت اور مویشی بانی پر ہے۔ بالخصوص پہاڑی علاقوں کے مکینوں کی زندگی کا انحصار ہی مال مویشی پر ہوتا ہے۔ یہ لوگ مویشیوں سے نہ صرف اپنی خوراک کی ضروریات پوری کرتے ہیں بلکہ ان کی تجارت ان کا ذریعہ معاش بھی ہے۔
    جنوبی وزیرستان میں جاری آپریشن کے باعث اپنی آبائی زمین، اپنا وطن چھوڑ کر آنے والے مہاجرین کا شمار بھی پاکستان کے ایسے ہی لوگوں میں ہوتا ہے جنکے لئے جانور ہی سب کچھ ہیں اور یہی وجہ ہے کہ ہجرت کے دوران یہ لوگ اپنے ساتھ مال مویشی بھی لے کر آئے ہیں۔
    ہجرت چاہے بین الاقوامی ہو یا مقامی، ہر اعتبار سے تکلیف دہ عمل ہے۔ اپنے بسے بسائے گھروں کو چھوڑنا یقیناً دکھ کی بات ہے اور اس سے بھی بڑی مشکل عارضی جگہ پر قیام ہے۔ ذرائع ابلاغ کے مطابق اب تک تقریباً ۱۰ لاکھ کے قریب آئی ڈی پیز اپنے علاقے چھوڑ کر عارضی کیمپس میں منتقل ہوچکے ہیں۔ اول تو اتنے لوگوں کا کسی عارضی جگہ پر جمع ہونا بذات خود نئی سے نئی مشکلات کو جنم دیتا ہے اور دوم ان کے لئے صاف ستھری رہائش کی سہولیات فراہم کرنا بھی مشکل کام ہے۔ ساتھ ہی ساتھ ان کے جانوروں کی صحت بھی ایک بہت بڑا مسئلہ ہے، کیونکہ اس وقت ان آئی ڈی پیز کے لئے جانور ان کی زندگی کی بقاء کا سہارا ہیں۔

    …آگے پڑھیے